کمیونزم ،کیپٹلزم ،اسلام ایک تقابلی جائزہ اقبال:سماجی ومعاشی تناظر (فکری خطاب) قسط نمبر 03

چونکہ 1900ء اقبالؒ کا ابتدائی دورتھا لیکن اقبال کا کئی اعتبارات سے اصل دور 1908ء کےبعد شروع ہوتا ہے جو اکثریت کیلئے سورس آف انسپائریشن ہے؛ جس سے عوام بہت کچھ سیکھتی اور اخذ کرتی ہے- لیکن اس کتاب کےدیباچہ میں اکنامکس کی اہمیت پرروشنی ڈالتے ہوئے علامہ نے کہا کہ موجودہ زمانےمیں جو اقوام اپنی اجتماعی معیشت بہتر بنانے کے لئے سوچ بچار نہیں کرتیں وہ دنیا میں بہت پیچھے رہ جائیں گی حتی ٰ کہ اُن کا زندہ رہنا بھی محال ہوجائے گا-حالانکہ علامہ اقبال شاعری، فارسی، اردو، عربی ادب کے طالب علم تھے لیکن اُن کی زیادہ دلچسپی کا موضوعِ سیاست بھی اُس طرح سے دلچسپی کا حامل نہ تھا جس طرح سےمعیشت کا تھا- اقبال کے نزدیک معیشت کو پڑھے اور اسے اپنی اجتماعی زندگی کا حصہ بنائے بغیر آپ ترقی نہیں کر سکتے- کیونکہ علامہ اقبال جس عہد میں زندہ تھے اس دور میں دُنیا میں دو معاشی تصورات کا زبردست ٹکراؤ تھا- ایک مغربی سرمایہ دارانہ معاشی نظریہ تھا اور دوسرا کارل مارکس کا نظریہ جو کہ ایک ’’Revolution‘‘ کی صورت میں روس میں برپا ہوا جسے لینن نے لیڈ کیا اور وہ دنیا میں آگے پھیلا- جس کی زد میں انڈیا کے بہت بڑے بڑے لیڈرز آتے ہیں جو اسےتسلیم بھی کرتے ہیں اور اس پر یقین بھی رکھتے ہیں- الغرض! دنیا کا کوئی خطہ اس سے بچا نہیں ہے-

زاغ دشتی ہو رہا ہے ہمسر شاہین و چرغ
کتنی سُرعت سے بدلتا ہے مزاج روزگار
چھا گئی آشفتہ ہو کر وُسعتِ اَفلاک پر
جس کو نادانی سے ہم سمجھے تھے اک مشت غبار

یہ اشعارابلیس کی مجلس شوریٰ سے ہیں جن میں ابلیس کا مشیر دوسرے مشیر کو مخاطب ہو کر کہتا ہے کہ ہم تو اشتراکیت کو ایک قلیل سے مشتِ غبار سمجھتے تھے لیکن یہ تو وسعتِ افلاک پہ چھا گئی ہے جس نے پوری دنیا کو اپنے گھیرے میں لے لیا ہے- آپ کے علم میں ہوگا کہ چند سال پہلے 2008ء میں جب اکنامک ’’Recession‘‘ شروع ہوا تویہ تحریک ’’Occupy wall street‘‘امریکہ کے گلی کوچوں میں پھیل گئی اور ابھی بھی امریکہ، یوکے اور دیگر ممالک میں اس تحریک کے سرگرم کارکن موجودہیں- مجھے حال ہی میں لندن میں کارل مارکس کی قبر دیکھنے کا اتفاق ہوا تو معلوم ہوا کہ یہاں عیسائیوں کے قبرستان میں باقی لوگوں کی قبروں پر صرف عیسائی لوگ اس وقت ہی آتے ہیں جب وہاں کوئی ان کا مذہبی تہوار ہوتا ہے اس کے علاوہ بہت کم لوگ ہیں جو یہاں آتے ہیں-لیکن واحد قبر کارل مارکس کی ہےجس کے لیےروزانہ گیٹ کھولنا اور بند کرنا پڑتا ہے کیونکہ اتنی کثیر تعداد میں لوگ اس کی قبر دیکھنے آتے ہیں- بات کا مقصد یہ ہےکہ معیشت کی دنیا میں آج بھی اُس کا تاثر زندہ اور تابندہ ہے- یہ الگ بات ہے کہ ہمارے ہاں جو مارکسسٹ تحاریک ہیں بلکہ تھیں وہ دم توڑ چکی ہیں اور اُن کا اثر باقی نہیں رہا –

اقبال کے نزدیک سرمایہ داری کی بحث بڑی دلچسپ ہے – اولاً آپ کےعلم میں ہے کہ اقبالؒ نے سرمایہ دارانہ نظام کو بڑے پُر زور طریقہ سے تنقید کا نشانہ بنایا ہے- جس کا ادراک ہمیں اقبال کی کچھ مشہور نظموں سے ہوتا ہے- اقبال کی مشہور فارسی کتاب ’’پیام ِ مشرق‘‘ میں اقبال کے اس نقطۂ نگاہ پہ ایک پورا باب ’’نقشِ فرنگ‘‘ کے نام سے ہے- اُس میں بالخصوص ایک نظم جس کا عنوان ’’صحبتِ رفتاگان در عالمِ بالا‘‘، ’’عالمِ بالا میں کچھ ارواح آپس میں ملاقات کرتی ہیں‘‘-یعنی اقبال کی دنیامیں جو کچھ ہو رہا ہے ان حالات و واقعات پروہ ارواح کے درمیان مکمل ایک مکالمہ ہے جس میں فرانسیسی فلاسفرز اگسٹس کومٹ، لینن اور قیصرولیم شامل ہیں- اسی طرح قسمت نامہ سرمایہ دار اورنوائے مزدور ہے اور اس کے علاوہ دیگر نظمیں بھی بڑی اہمیت کی حامل ہیں – جاوید نامہ میں بھی یہ موضوع جا بجا پھیلا ہوا ہے ، خاص کر فلکِ عطّارد کی سیر کے دوران گفتگو کا زیادہ تر رُجحان اِسی جانب ہے- زبورِ عجم کی کئی غزلیں اِن تصورات سے لبریز ہیں-یوں تو اُردو کلیّات بھی بھری پڑی ہے لیکن ان افکار سے خاص طور پہ ارمغان حجاز اردو میں ابلیس کی مجلس ِ شوریٰ اس سلسلے میں سرِ فہرست اہمیت کی حامل ہے – اسی طرح بالِ جبریل میں تین نظمیں ایک تسلسل سے ہیں – پہلی نظم کا عنوان ہے ’’لینن خدا کےحضور‘‘ دوسری ’’فرشتوں کا گیت‘‘ اور تیسری ’’فرمان ِ خدا فرشتوں کے نام‘‘ سے موسوم ہے- پہلی نظم میں لینن اللہ تعالیٰ کےحضور دُنیائے کُہنہ کی یہ شکایت کرتاہےکہ:

یہ علم یہ حکمت یہ حکومت یہ تدبر
پیتے ہیں لہُو، دیتے ہیں تعلیمِ مُساوات
کب ڈوبے گا سرمایہ پرستی کا سفینہ؟
دنیا ہے تیری منتظرِ روز مکافات
جاری ہے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں